Android AppiOS App

چوہدری صاحب : رسول اللہ ؐ کے پروانوں سے جو بھی ٹکرایا ، ماضی کا قصہ بن گیا ، حکومت کو کہیں ہتھ ہولا رکھے ورنہ ۔۔۔۔۔چوہدری برادران کو زبردست مشورہ دے دیا گیا

  پیر‬‮ 19 اپریل‬‮ 2021  |  13:04

تحریک لبیک والے معاملے کو شروع ہوئے کئی دن گزر گئے ، تحریک والے اپنی ضد پر قائم اور حکومت بدستور شدید غصے میں ، کہ ریاست کی رٹ کو چیلنج کیوں کیا گیا ، پولیس والوں سے غلط سلوک کیوں کیا گیا ،انتہائی افسوس کی بات یہ کہ

کوئی فریق یا کوئی فرد ایسا نہیں جو اس نازک موقع پر درمیان میں آکر صلح صفائی کروا دے ، چوہدری صاحبان جو ہر ایسے وقت پر پیش پیش ہوتے ہیں وہ بھی خاموش ہیں ، مولانا طارق جمیل بھی چپ چاپ بیٹھے دیکھ رہے ہیں ۔ غیر جانبداری سے بات کریں تو حکومت نے ایک تو معاہدے پر عمل نہ کیا دوسری بات احتجاج کو دبانے کے لیے تحریک لبیک کے قائد کو گرفتار کر لیا ،

اب کارکنوں کا سڑکوں پر آنا تو بنتا تھا ، اور پاکستانی جب سڑکوں پر آجائیں تو کیا کچھ نہیں کرتے ؟ کیا آپ کو پی آئی سی لاہور والا واقعہ یاد ہے جس میں ہزاروں وکلاء نے پی آئی سی کی اینٹ سے اینٹ بجا دی تھی ، کئی افراد اس دن جان کی بازی ہار گئے تھے ، کیا ان کے خلاف بھی اتنا ہی سخت رویہ اپنایا گیا جتنا تحریک لبیک کے ساتھ روا رکھا جارہا ہے ۔ مولانا خادم حسین رضوی کی وفات پر اور انکے جنازے کے بعد انکے دشمن بھی انکی تعریفوں کے پل باندھنے لگے تھے ، کیوں کہ ان کا موقف بہت اعلیٰ و ارفع تھا ۔ اب اسی موقف اور بیانیے کو لے کر اگر انکا بیٹا سعد رضوی سامنے آیا ہے تو حکومت نے اسے اپنی مخالفت سمجھ کر بدامن اور فسادی قرار دے دیا ہے ، تحریک لبیک کو سرے سے ختم کیا جارہا ہے ، مولانا خادم رضوی کہا کرتے تھے ، رسول اللہ ؐ کے پروانوں سے جو ٹکرایا فنا ہو گیا ، ہم اس ملک کے غیر جانبدار طبقات

خاص طور پر چوہدری برادران اور مولانا طارق جمیل سے دست بدستہ عرض کرتے ہیں کہ ارض وطن میں ایک خوفناک آگ بھڑکنے والی ہے ، خدا را حکومت کو صحیح راستہ دکھائیے ، لبرلز کی باتوں میں نہ آئیے ، دل میں عشق رسول اور زبان پر نام رسول رکھنے والوں کے ساتھ اتنی سختی نہ کیجیے ، بے شک جرم کرنے والوں کو اسکی سزا ملنی چاہیے ۔ وزیراعظم عمران خان ایک بات یاد رکھیں 2 سال بعد انکی حکومت ختم ہو گئی اور

انکی جگہ کوئی اور اقتدار میں آگیا ، اور خان صاحب کسی ایشو پر احتجاج کی کال دیتے ہوئے سڑکوں پر آگئے اور حکومت وقت نے انہیں گرفتار کر لیا تو انکے ٹائیگرز سڑکوں پر آ جائیں گے یا گھروں میں مصلے ڈال کر بیٹھ جائیں گے ، خدارا ہوش کے ناخن لیں ، دونوں فریق یعنی حکومت اور تحریک لبیک مذاکرات کی طرف آئیں ، وزیرداخلہ شیخ رشید صاحب عقل کو ہاتھ ماریں ، ایسے بیانات نہ دیں کہ کل کو انکا سڑکوں پر نکلنا مشکل ہو جائے ۔ ایک بار پھر چوہدری صاحبان سے درخواست کہ درمیان میں پڑ کر معاملے کو سلجھانے کا مشن شروع کریں پوری قوم کی دعائیں انکے ساتھ ہیں ۔۔۔۔

انٹرنیٹ کی دنیا سے ‎‎

دن کی زیادہ پڑھی گئیں پوسٹس‎