Android AppiOS App

کارکردگی چاہیئے تو فُل چارج دو۔۔!! جہانگیر ترین نے اپنے مستقبل کا فیصلہ کر لیا، کیا کرنے والے ہیں ؟ سہیل وڑائچ کا ناقابلِ یقین انکشاف

  بدھ‬‮ 3 فروری‬‮ 2021  |  21:12

سینئر صحافی سہیل وڑائچ اپنے کالم میں کہتے ہیں کہ فیصل آباد سے پی ٹی آئی رہنما راجہ ریاض نے تجویز دی ہے کہ آنے والے سینیٹ الیکشن میں پی ٹی آئی کو کامیاب کروانے کے لیے ضروری ہے کہ جہانگیر ترین کو متحرک کیا جائے۔راجہ ریاض پارٹی کے کئی رہنما چاہتے ہیں کہ جہانگیر ترین ایک بار پھر تحریک انصاف کے لیے اس طرح

متحرک ہو جائیں جیسے وہ حکومت سازی کے وقت تھے۔ جب کہ دوسری طرف جہانگیر ترین یہ طے کیے بیٹھے ہیں کہ وہ اب صرف اسی صورت میں متحرک ہوں گے اگر انہیں فل چارچ ملے گا۔وہ چاہتے ہیں اگر وہ متحرک ہوں تو پھر گورننس میں بہتری کے نتائج بھی دے سکیں۔صرف ایک وقتی ٹاسک کے لیے وہ اپنی خود ساختہ

خاموشی توڑنے کو تیار نہیں۔اس کے بجائے وہ دیکھو اور انتظار کرو کی پالیسی پر عمل پیرا رہیں گے تا کہ سیاسی طور پر ماحول ان کے لیے سازگار ہو جائے۔

پاکستان میں سیاسی اختلاف بالاآخر شخص اختلاف تبدیل ہو جاتا ہے اور شخصی اختلاف تعلقات میں ایسی تلخیاں گول دیتے ہیں کہ ان کو بلانا مشکل ہو جاتا ہے۔ایک وقت تھا عمران خان اور جہانگیر ترین یک جان دو قلب ہوا کرتے تھے۔پھر ایسا وقت آیا کہ عمران خو کابینہ کے بھرے اجلاس میں ترین کے بدخواہوں نے بتایا کہ ترین بھی دوسرے صنعت کاروں کی طرح متوازی حسابات بنا رکھے ہیں۔

راجہ ریاض نے ارکان اسمبلی کو یقین دلایا کہ اگر جہانگیر ترین متحرک ہو گئے تو تحریک انصاف نہ صرف سیٹ میں اکثریت حاصل کر لے گی بلکہ پیپلز پارٹی ن لیگ اور دوسری جماعتوں کے کئی اراکین بھی خفیہ طور پر تحریک انصاف کو ووٹ دیں گے۔ایک رکن اسمبلی نے کہا کہ ترین اور کپتان مل کر ایک بہترین ٹیم بناتے تھے۔بظاہر لگ رہا ہے کہ جہانگیر ترین باوجود ارکان اسمبلی کے مطالبوں کے سینیٹ الیکشن میں متحرک نہیں ہوں گے۔

وہ شاید ان اچھے دنوں کا انتظار کریں گے جب انہیں فری ہینڈ ملے اور وہ کچن کابینہ میں اپنے مخالفوں سے چھٹکارا پاکر حکومتی گورننس میں کچھ حصہ ڈال سکیں گے۔سہیل وڑائچ مزید کہتے ہیں کہ جہانگیر ترین کو بار بار احساس ہوتا ہے کہ کپتان نے اپنی جیت کے لیے اپنے قریبی ساتھی کی قربانی دے کر اس کا سیاسی کیرئیر تباہ کر دیا۔

انٹرنیٹ کی دنیا سے ‎‎

دن کی زیادہ پڑھی گئیں پوسٹس‎