Android AppiOS App

اپوزیشن کے لیے خطرے کی گھنٹی

  جمعرات‬‮ 7 جنوری‬‮ 2021  |  13:17

سینئر صحافی عارف حمید بھٹی نے کہا ہے کہ عمران خان کی خواہش ہے پی ڈی ایم کا ایک بھی بندہ باہر نہ رہے ۔ نجی ٹی وی چینل کے پروگرام میں گفتگو کرتے ہوئے عارف حمید بھٹی نے کہا کہ خواجہ آصف اور مولانا فضل الرحمان کیخلاف کیس مضبوط ہیں، انہوں

نے بے پناہ کرپشن کی ہے، میں تو ان کا دفاع نہیں کرسکتا ، لیکن عمران خان اس لیے ناکام ہے کہ وہ کراس دی بورڈ جا کر کارروائی نہیں کرتے۔ یہ لوگ کرپشن کررہے تھے تو کیا اب کرپشن رک گئی ہے؟۔ وزیراعظم اگر چاہتے ہیں کہ عملی طور پر کرپشن رکے تو انہیں کراس دی بورڈ جانا ہوگا۔ انہیں چاہیے کہ کچھ بہتری لائیں تاکہ کچھ تو بہتری ہو۔ انہوں نے کہا کہ

وزیراعظم نے ترجمانوں کو کہا کہ پیپلز پارٹی کو ایکسپوز کریں، تو کیا پنجاب یا وفاق میں کرپشن نہیں ہے؟ صرف سندھ حکومت کیوں؟۔ عمران خان کو کراس دی بورڈ جانا ہوگا۔ واضح رہے کہ نیب نے مسلم لیگ ن کے سینئر رہنما خواجہ آصف کو چند دن قبل گرفتار کرلیا تھا ، جبکہ مولانا فضل الرحمان کیخلاف بھی نیب میں کیس چل رہا ہے ۔ یاد رہے یکم جنوری کو احتساب عدالت نے مسلم لیگ (ن ) کے مرکزی رہنما خواجہ آصف کو 14روزہ کے جسمانی ریمانڈ پر نیب کے حوالے کر رکھا ہے۔ عدالت کو بتایا گیا کہ خواجہ آصف کے تفتشی افسر تفتیش میں سچائی اور اصل حقائق سامنے لائے۔ پراسکیوٹر کے مطابق ملزم کیخلاف اینٹی منی لانڈرنگ ایکٹ 2010 کی سیکشن (3) کے تحت تحقیقات جاری ہیں۔ تاہم قبل 1991 میں

ا اثاثہ خات 51 لاکھ روپے پر مشتمل تھے ۔ 2018 تک مختلف عہدوں پر رہنے کے بعد انکے اثاثہ جات 221 ملین تک پہنچ گئے جو انکی ظاہری آمدن سے مطابقت نہیں رکھتے ۔ خواجہ آصف اپنے ملازم طارق میر کے نام پہ ایک بے نامی کمپنی ” طارق میر اینڈ کمپنی” بھی چلا رہے ہیں۔ بینک اکائونٹ میں 40 کروڑ کی خطیر رقم جمع کروائی گئی ۔ خواجہ آصف بیرون ملک ملازمت سے حاصل آمدن کا کوئی کاغذی ثبوت بھی فراہم نہ کر سکے، ملزم کے وکیل مطابق پی ٹی آئی کے رہنما عثمان ڈار کے کہنے پر انکوائری شروع کی گئی ۔

انٹرنیٹ کی دنیا سے ‎‎

دن کی زیادہ پڑھی گئیں پوسٹس‎