Android AppiOS App

’’ یہ مذاکرات کی راہ میں رکاوٹ ہے۔۔۔‘‘ محمدعلی دُرانی نےتہلکہ مچادیا،حکومت اوراپوزیشن سوچ میں

  جمعہ‬‮ 1 جنوری‬‮ 2021  |  13:45

مسلم لیگ فنکشنل کے سیکرٹری جنرل محمد علی درانی نے کہا ہے کہ نیب گرفتاریاں اتفاق کی راہ میں رکاوٹ ہیں ۔ اپوزیشن کوئی ریلیف نہیں مانگ رہی ہے۔ مولانا فضل الرحمان سے ملاقات کے بعد مشترکہ پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے محمد علی درانی نے کہا کہ ، اپوزیشن نے

کوئی ریلیف نہیں مانگا، وہ تو اپنے موقف پر ڈٹی ہوئی ہے ۔ استعفوں کے معاملے پر ڈائیلاگ ضروری ہے، ہم سمجھتے ہیں کہ اختلافات سے مستقبل کے راستے نکلتے ہیں، سارے عمل سے آگے بڑھنے کے راستے نکلیں گے۔ انہوں نے کہا کہ گرینڈ ڈائیلاگ شروع کرنے سے پہلے ایجنڈا سیٹ کرنے کی ضرورت ہے اور اس کیلئے ٹریک ٹو ڈپلومیسی کا آغاز کیا، ٹریک ٹو ڈائیلاگ کا مطلب ہی یہ ہوتا ہے کہ

آپ اپنی بات خاموشی سے کرتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ حکومت اور اپوزیشن چاہے نہ چاہے ڈائیلاگ ضروری ہے، اپوزیشن کوئی ریلیف نہیں مانگ رہی، وہ اپنے موقف پر ڈٹی ہوئی ہے اور سمجھ رہی ہے کہ عوام میں اس کی مقبولیت میں اضافہ ہورہا ہے۔ پریس کانفرنس کے دوران مولانا فضل الرحمان نے کہا کہ محمد علی درانی ملاقات کیلئے تشریف لائے تھے، ان کی قیادت کی سوچ مثبت ہے، لیکن زمینی حقائق کی بنیاد پر پی ڈی ایم نے موقف اپنایا ہے۔ یہ حکومت عوام کی نمائندہ حکومت نہیں ہے، اگر مذاکرات ہوتے ہیں تو یہ حکومت کس کی نمائندگی کرتے ہوئے مذاکرات کرے گی ۔ مولانا نے کہا کہ درانی صاحب بضد ہیں تو اس پر مشاورت کی جائے گی۔ پی ڈی ایم میں جو فیصلہ ہوگا، وہی ہمارا

فیصلہ ہوگا۔ ہم نے مذاکرات کو قبل از امکان قرار دیا ہے ۔ تجاویز پر مشاورت کے بعد پی ڈی ایم فیصلہ کرے گی۔ انہوں نے مزید کہا کہ پی ڈی ایم کے اجلاس میں کل پی پی کی تجاویز آئیں گی۔ پی ڈی ایم میں جو ڈینٹ تھا اس کو نکال دیا گیا ہے۔ بلاول بھٹو کے حوالے سے پوچھے گئے سوال کے جواب میں مولانا نے کہا کہ بلاول بھٹو نے بھی کہا ہے حتمی فیصلہ پی ڈی ایم کا ہی ہوگا۔ اختلافات کرنے والوں کو نکال کر ہم مزید مضبوط ہوگئے ہیں۔

انٹرنیٹ کی دنیا سے ‎‎

دن کی زیادہ پڑھی گئیں پوسٹس‎