Android AppiOS App

خواجہ آصف کے گرفتار ی پر نواز شریف نے کیا رد عمل دیا؟ جاننے والوں کے لیے یقین کرنا مشکل

  بدھ‬‮ 30 دسمبر‬‮ 2020  |  14:13

پاکستان مسلم لیگ ن کے قائد اور سابق وزیر اعظم میاں محمد نواز شریف نے کہا ہے کہ حکومت کے اندھے سیاسی انتقام کے دن گنے جا چکے ہیں، خواجہ آصف کی گرفتاری سلیکٹرز اور سلیکٹڈ کے گٹھ جوڑ کا قابل مذمت واقعہ ہے، ان حرکتوں سے یہ اپنے انجام کو مزید قریب

لا رہے ہیں۔ انہوں نے ٹویٹر پر مسلم لیگ ن کے پارلیمانی لیڈر خواجہ آصف کی گرفتاری پر اپنے ردعمل میں کہا کہ خواجہ آصف کی گرفتاری سلیکٹرز اور سلیکٹڈ کے گٹھ جوڑ کا انتہائی قابل مذمت واقعہ ہے۔ ایسی بھونڈی حرکتوں سے حکومتی بوکھلاہٹ کا اندازہ لگایا جاسکتا ہے۔ لیکن ان حرکتوں سے یہ اپنے انجام کو مزید قریب لا رہے ہیں۔ نوازشریف نے کہا کہ اندھے سیاسی انتقام کے دن گنے جا

چکے ہیں۔ خیال رہے نیب نے خواجہ آصف کو اسلام آباد میں احسن اقبال کے گھر سے گرفتار لیا ہے۔ خواجہ آصف کو آمدن سے زائد اثاثوں کے کیس میں گرفتار کیا گیا ہے۔ نیب ذرائع کا کہنا ہے کہ خواجہ آصف کو اسی کیس میں گرفتارکیا گیا ہے جو پی ٹی آئی رہنماء عثمان ڈار نے ان پر کیا تھا۔ عثمان ڈار کے اسی کیس پر خواجہ آصف کو اسمبلی رکنیت سے نااہل قرار دیا گیا تھا۔ سپریم کورٹ نے خواجہ آصف کی اسمبلی رکنیت بحال کی تھی۔ خواجہ آصف دبئی سے حاصل 22 کروڑ روپے کی آمدن کے ذرائع بتانے میں ناکام رہے۔ ن لیگی رہنماؤں نے خواجہ آصف کی گرفتاری پر شدید ردعمل دیا ہے۔ مسلم لیگ ن کی مرکزی نائب صدر مریم نواز نے خواجہ آصف کی گرفتاری پرمیڈیا سے گفتگو میں

اپنے شدید ردعمل میں کہا کہ خواجہ آصف کو گرفتارکیا گیا ہے۔اس طرح راتوں رات کسی کو اغواء کرنا وہ بھی اس کیس میں جس میں کوئی الزام ثابت نہیں ہوتا، شکست کے خوف سے کانپتے اور لرزتے ہوئے فیصلے کیے جارہے ہیں، کیونکہ حکومت جانے کا خوف ان کے چہروں، پریس کانفرنس اور حرکات سے نظر آرہا ہے ۔ حلفاً کہتی ہوں کہ خواجہ آصف نے مجھے 2باتیں بتائیں کہ انہوں نے مجھے بلایا اور کہا کہ نوازشریف کا ساتھ چھوڑ دیں، جس پر خواجہ آصف نے کہا کہ وفادار باپ کا بیٹا ہوں، میرے بال سفید ہوگئے ، عمر بھر کا ساتھ ہے، میری پارٹی متحد ہے، ہم بھی متحد ہیں، ہم نوازشریف کا ساتھ نہیں چھوڑ سکتے تو پھر نتائج بھگتنے کیلئے تیار رہیں، جس پر خواجہ آصف نے کہا

کہ آپ جو مرضی کرلیں، میں ساتھ نہیں چھوڑوں گا۔ خواجہ آصف سے کہا گیا آپ کے کیسز چند دنوں میں ختم کردیے جائیں گے،خواجہ آصف نے کہا کہ میں نوازشریف کے بیانیئے سے پیچھے نہیں ہٹوں گا۔ خواجہ آصف کی گرفتاری نہیں اغواء ہے، سپریم کورٹ اور ہائیکورٹس کہہ چکی ہیں نیب سیاسی انجیئرنگ کا ادارہ ہے۔سیاسی جوڑ توڑ کیلئے استعمال کیا جاتا ہے۔ عدلیہ سے کہوں گی قوم کو آپ سے

امید ہے، آپ انصاف کی کرسیوں پر بیٹھے ہیں، قوم کوآپ سے انصاف کی امید ہے ۔ نیب عمران خان کا آلہ کار بن چکا ہے،جو لوگوں کو بغیر ثبوت گھروں سے اٹھالیتی ہے۔ اب عدالت کو چپ نہیں رہنا چاہیے، عدالت کو اب آگے بڑھ کر ظلم کر مٹانا چاہیے۔حمزہ شہباز سواسال سے جیل کی کوٹھری میں ہے۔ ان کو خوف ہے کہ مسلم لیگ اگر استعفے دے گی تو وہ کردار ادا کریں گے؟ لیکن استعفے تو سارے آچکے ہیں، صرف ایک ممبر خاتون جو بیمار ہے وہ رہ گئی ہیں۔ خواجہ آصف کی گرفتاری سے ہمیں ڈرایا نہیں جاسکتا، سب پارٹی رہنماء نوازشریف کے بیانیئے کے ساتھ کھڑے ہیں۔ ایسے ہتھکنڈے حکومت کو گھر لے کر جائیں گے۔پی ڈی ایم اس پر شدید ردعمل دے گی، وارننگ دیتی ہوں کہ مسلم لیگ ن اور پی ڈی ایم اس پر ردعمل دے گی ، خواجہ آصف کو چھوڑنا پڑے گا، ورنہ معاملات کہیں سے کہیں جاسکتے ہیں۔ نوازشریف کی واپسی سے متعلق سوال پر انہوں نے کہا کہ میں بلاول بھٹو اور ان کی جماعت کے اعلامیہ آنے تک کوئی بیان نہیں دوں گی، کیوں کہ ہمیں پتا کہ میڈیا کو کون کنٹرول کرنا ہے، ذرائع سے خبریں پیپلزپارٹی نہیں کہیں او ر سے آتی ہیں۔ انہوں نے کہا کہ نیب کو بجلی، ایل این جی ، بلین ٹری سونامی، آٹا چینی چورکیوں نظر نہیں آتے، نیب اندھی ہے یا نیب اتنے پریشر میں ہے ۔

انٹرنیٹ کی دنیا سے ‎‎

دن کی زیادہ پڑھی گئیں پوسٹس‎