Android AppiOS App

مولانا فضل الرحمان کے ساتھ “لطیفہ” ہوگیا۔۔۔ مولانا کو لیڈر بنا کر کیا شرمناک کام کر دیا گیا؟ جانیے

  ہفتہ‬‮ 17 اکتوبر‬‮ 2020  |  15:45

پاکستان ڈیموکریٹک موومنٹ (پی ڈی ایم) کی جانب سے گوجرانوالہ کے جناح سٹیڈیم میں پنڈال سجایا جاچکا ہے اور سیاسی رہنما جلسہ گاہ کی طرف رواں دواں ہیں۔ بلاول بھٹو زرداری لالہ موسیٰ سے جبکہ مولانا فضل الرحمان اور مریم نواز لاہور سے گوجرانوالہ کے جلسے میں شامل ہوں گی۔ سیاسی رہنما بڑی ریلیوں کی صورت

جلسہ گاہ جا رہے ہیں لیکن ایسے میں وزیر اعظم کے معاون خصوصی برائے سیاسی روابط ڈاکٹر شہباز گل نے حیران کن دعویٰ کیا ہے۔ڈاکٹر شہباز گل نے کہا کہ ” ایک اور لطیفہ ہو گیا۔ مولانا فضل جن پر تکیہ تھا ان کے قافلے میں ٹوٹل 4 مزدے جس میں 150 حفظ کرنے والے مدرسے کے بچے اور 13 گاڑیاں شامل ہیں۔ مولانا دو گھنٹے اضافی مسجد میں بیٹھے رہے

اور دوسرے مدارس سے مدد مانگتے رہے۔ انکار ہونے پر اسی تنخواہ پر چل پڑے۔”خیال رہے کہ مولانا فضل الرحمان نے پی ڈی ایم جلسے میں شرکت سے پہلے نماز جمعہ جامعہ اشرفیہ لاہور میں پڑھائی جس کے بعد وہ گوجرانوالہ کیلئے نکلے۔ انہوں نے جین مندر چوک پر سڑک پر ہی مغرب کی نماز کی امامت کی، اب ان کی ریلی جلسہ گاہ کی طرف رواں دواں ہے۔

سیاسی رہنما بڑی ریلیوں کی صورت جلسہ گاہ جا رہے ہیں لیکن ایسے میں وزیر اعظم کے معاون خصوصی برائے سیاسی روابط ڈاکٹر شہباز گل نے حیران کن دعویٰ کیا ہے۔ڈاکٹر شہباز گل نے کہا کہ ” ایک اور لطیفہ ہو گیا۔ مولانا فضل جن پر تکیہ تھا ان کے قافلے میں ٹوٹل 4 مزدے جس میں 150 حفظ کرنے والے مدرسے کے بچے اور 13 گاڑیاں شامل ہیں۔ مولانا دو گھنٹے اضافی مسجد میں بیٹھے رہے اور دوسرے مدارس سے مدد مانگتے رہے۔ انکار ہونے پر اسی تنخواہ پر چل پڑے۔”خیال رہے کہ مولانا فضل الرحمان نے پی ڈی ایم جلسے میں شرکت سے پہلے نماز جمعہ جامعہ اشرفیہ لاہور میں پڑھائی جس کے بعد وہ گوجرانوالہ کیلئے نکلے۔ انہوں نے جین مندر چوک پر سڑک پر ہی مغرب کی نماز کی امامت کی، اب ان کی ریلی جلسہ گاہ کی طرف رواں دواں ہے۔

انٹرنیٹ کی دنیا سے ‎‎

دن کی زیادہ پڑھی گئیں پوسٹس‎