Android AppiOS App

قائد اعظم محمد علی جناح کو ایک بار بمبئی میں وکالت کی پریکٹس کیلئے کریکٹر سرٹیفیکیٹ کی ضرورتھی تو انہوںنے کس طرح کمال ذہانت سے ایک انجان

  جمعرات‬‮ 24 جنوری‬‮ 2019  |  13:38

ایک بار قائد اعظم محمد علی جناح ؒ کو بمبئی میں پریکٹس شروع کرنے کے لیے کریکٹر سرٹیفیکیٹ کی ضرورت تھی-اتفاقاً شہر میں کوئی مجسٹریٹ واقف نہ تھا چنانچہ ایک روز صبح صبح وہ ایک انگریز مجسٹریٹ کی کوٹھی پر گئے اور اپنے نام٬ ایم اے جناح٬ بار ایٹ لا کی چٹ اندر بھیج دی- مجسٹریٹ نے نام سے متاثر ہو کر انہیں اندر بلا لیا- قائد اعظم محمد علی جناح ؒ نےاندر جاتے ہی سوال کیا “ میرے بارے میں آپ کی کیا رائے ہے؟“ “ مجھے آپ بےحد شریف

آدمی معلوم ہوتے ہیں “مجسٹریٹ نے جواب “ مجسٹریٹ نے جواب دیا- اس پر قائد اعظم محمد علی جناح ؒ نے ایک کاغذ آگے بڑھاتے ہوئے کہا “ جناب عالی یہ الفاظ اس پر لکھ دیجیے٬

دراصل مجھے پریکٹس شروع کرنے کے لیے کریکٹر سرٹیفیکیٹ کی ضرورت ہے“-انسٹی ٹیوٹ آف آل انٹیلی جنٹ لائف کے بانی ڈاکٹر ایلن قیصرنے کہاہے کہ 1934ءمیں جب قائداعظم محمد علی جناحؒ لندن میں تھے لیکن جب وہ واپس ممبئی آئے تو ان کے سب سے قریبی دوست علامہ شبیر احمد عثمانی نے ان سے پوچھا کہ ہم سب آپ کو واپس لانے کی کوشش کر رہے تھے لیکن آپ نہیں مانے ،

آپ واپس آگئے ہیں ہم بہت خوش ہیں ،کس کے کہنے پر آئے ،علامہ اقبال نے کوئی شاعری لکھی جس کی وجہ سے آپ واپس آئے یا لیاقت علی خان نے یا اورکسی نے،کیونکہ ہم سب آپ کو لانے کی کوشش کررہے تھے ۔قائداعظم محمد علی جناح نے جواب دیاکہ ایسی بات نہیں ہے جیسے آپ سوچ رہے ہیں میں آپ کو بتاؤں گا حقیقت میں کیا ہوا لیکن ایک شرط پر کہ آپ کسی کو نہ بتائیں جب تک میں زندہ ہوں۔ تو علامہ شبیر احمد عثمانی صاحب نے کہا ٹھیک ہے۔ قائداعظم نے بتایا جب میں لندن میں تھا ،تو ایک رات کو میرا پلنگ ہل رہا تھا ،

میں جاگ گیا تھا، ادھر اُدھر دیکھا کہ پلنگ ایسے کیوں ہل رہا تھاکچھ نہیں تھا میں سو گیا ، پلنگ دوبارہ ہلنے لگا، اتنے زور سے کہ میں سوچ رہا تھا کہ زلزلہ آرہا ہے، میں جاگ گیا اور اٹھ کر باہر نکل گیا گھر سے تو باہر دیکھا کوئی اور لوگ باہر نہیں ہیں میں پھر آ کرسوگیا۔ تیسری بار پھر پلنگ ہل رہا تھا اورایک بار پھر میں جاگ گیا تو کیا دیکھتا ہوں کہ میرے کمرے میں ایک بڑی بزرگ شخصیت کھڑی ہیں،

۔قائد اعظم نے انگریزی زبان میں پوچھا کہ ’آپ کون ہیں تو آگے سے انگریزی میں ہی جواب ملا کہ میں ’’تمہارا نبی ﷺ ہوں‘‘ ،قائد اعظم ایک دم ہاتھ باندھ کر کھڑے ہو گئے اور کہا کہ میرے آقا میرے لئے کیا حکم ہے اورمیں ’آپ کیلئے کیا کر سکتا ہوں ‘۔’آپ ﷺ نے حکم دیتے ہوئے فرمایا کہ تم فوری واپس برصغیر جاؤ،برصغیر کے مسلمانوں کو تمہاری بہت ضرورت ہے اور آزادی کی جدو جہد کی سربراہی کرو میں تمہارے ساتھ ہوں ۔ انشااللہ تم ہی اس مہم میں کامیابی حاصل کروگے۔

دن کی زیادہ پڑھی گئیں پوسٹس‎