جو بھی مر د بیوہ خاتون سے شادی کرے گا اس کو2 لاکھ روپے دیے جائیں گے کیونک

  ہفتہ‬‮ 18 اگست‬‮ 2018  |  18:06

بھارتی ریاست مدھیہ پردیش میں بیوہ خواتین کی دوبارہ شادیوں کو فروغ دینے کیلئے سکیم کا اعلان کیا گیا ہے جس کے تحت بیوہ کے ساتھ شادی کرنے والے شخص کو دو لاکھ روپے دیئے جائیں گے ۔بھارتی میڈیا کے مطابق ریاستی حکام کا کہنا ہے کہ یہ انقلابی قدم پورے بھارت میں سب سے پہلے مدھیہ پردیش میں لیا گیا ہے۔ اس سکیم کے تحت سالانہ 1000 ہزار افراد مستفید ہو سکیں گے۔ رواں سال جولائی میں بھارتی سپریم کورٹ کی جانب سے حکومت کو بیوہ خواتین

کی فلاح وبہبود کیلئے۔اقدامات کرنے کا حکم جاری کیا

گیا تھا جس کے بعد یہ قدم اٹھایا گیا ہے۔ ایم پی حکومت کے مطابق ریاست میں بیوہ خواتین کی درست تعداد کا تخمینہ لگایا جا رہا ہے۔ اور اس بات کو یقینی بنایا جائے گا کہ اس سکیم کا غلط استعمال نہ ہو۔ بھارتی ریاست مدھیہ پردیش کی جانب سے اس سکیم کیلئے 20 کروڑ کے فنڈز مختص کیے گئے ہیں جس کے تحت 18 سے 45 سال تک کی بیواو¿ں سے شادی کرنے پر 2 لاکھ ملیں گے۔بطور مسلمان یہ ہم سب کا عقیدہ ہے کہ ہمیں آخرت میں اپنے دنیا میں کئے گئے تمام اعمال کا حساب دینا ہے۔

مختلف حوالوں کو مدنظر رکھا جائے تو ہمیں پتا چلتا ہے کہ بروز محشر جہاں نہ ماں اپنے بیٹے کو پہچانے گی اور نہ بیٹا اپنی ماں کو۔ ہر شخص ایک ایک نیکی کو ترس رہا ہوگا اور خود پر افسوس کرے گا کہ میں نے دنیا میں رہ کر نیک اعمال کیوں نہ کئے اور میں کیوں کر گناہوں میں پڑا۔:حضور پاک ﷺ کا فرمان عالیشان کا مفہوم ہےقیامت کے دن کوئی ایسی آنکھ نہ ہوگیجو رو نہیں رہی ہوگی۔ پس صرف تین ایسی آنکھیں ہیں جو نہیں رو رہی ہوں گی۔ان تین آنکھوں میں سے پہلی آنکھ وہ ہے جو غیر محرم کی طرف دیکھنے سے بچی۔دوسری وہ آنکھ جو اللہ عزوجل کی راہمیں اس کے راستے کے اندر جاگتی رہی، پہرہ دیتی رہی یا سرحدوں کے اوپر حفاظت میں مشغول رہی۔اور تیسری وہ آنکھ جو جس کے بارے میں جان کر آپ کے بھی رونگٹے کھڑے ہوجائیں گے۔

فرمایا تیسری وہ آنکھ جس سے خوف خدا میں مکھی کے سر کے برابر بھی آنسو نکلا ہو۔حضور پاک ﷺ کے فرامین کی روشنی میں نظر کی حفاظت بے حد ضروری ہے اور اللہ عزوجل نے خصوصیت کے ساتھ قرآن پاک میں اس کا تذکرہ ارشاد فرمایا ہے۔:مفہوم ملاحظہ فرمائیںاور اپنی شرمگاہ کی حفاظت کریں، یہ بہتر ہے ان کے لئے۔بے شک اللہ ان کے کاموں کی خبر رکھتا ہے یعنی اگر تم اپنی نظر کو محفوظ نہیں رکھ پاتے تو مت سمجھو کہ کسی نے دیکھا نہیں ہے، تمہارا رب دیکھ رہا ہے۔ اس کی نظر سے کوئی شے پوشیدہ نہیں ہے۔

ایک ایک چیز لکھی جارہی ہے اور اس کا حساب کل تمہیں دینا پڑے گا۔ بے شک وہ جانتا ہے وہ دیکھ رہا ہے اگر تم بچ جاؤ تو وہ پھر بھی دیکھ رہا ہے اور اگر تم نہ بچو تو وہ پھر بھی دیکھ رہا ہے۔دوسری طرف مسلمان عورتوں کو بھی یہ حکم دیا ہے کہ اے محبوب مسلمان عورتوں کو بھی یہ حکم دیں کہ وہ بھی اپنی نظروں کو نیچا رکھیں۔اگر مرد کو روکا گیا ہے کہ وہ غیر محرم عورت کو نہ دیکھے تو عورت کو بھی روکا گیا ہے۔ اس لئے ہر صاحبِ ایمان مسلمان کو اپنی آنکھوں کی حفاظت کرنی چاہیئے اپنی آنکھوں کو ان آنکھوں میں شمار کرنا چاہیئے جن سے قیامت کے دن آنسو نہ گر رہے ہوں یا نہ رو رہی ہوں۔اللہ سے دعا ہے کہ وہ ہمیں اپنی آنکھوں کی حفاظت کرنے والا سچا پکا مسلمان بننے کی توفیق عطا فرمائے (آمین)۔

دن کی زیادہ پڑھی گئیں پوسٹس‎