مبارک درخت

  بدھ‬‮ 30 مئی‬‮‬‮ 2018  |  12:57

حضرت سعدیؒ بیان فرماتے ہیں کہ میں دیارِبکر میں ایک امیر آدمی کے گھر مہمان تھا۔مال و دولت کے علاوہ خدا نے اس شخص کو ایک خوبروبیٹا بھی دیا تھا۔ایک رات وہ شخص مجھ سے کہنے لگا کہ سعدیؒ ،شاید تمہیں یہ معلوم نہیں ہے کہ میرے گھر بیٹا ایک مدت کی دعاؤں اور تمناؤں کے بعد پیدا ہوا ہے۔فلاں مقام پر ایک بابرکت درخت ہے ۔لوگ اس درخت کے قریب جاکر دعائیں مانتے ہیں اور ان کی مرادیں مل جاتی ہیں ۔میں نے اس بابرکت درخت کے پاس جاکر دعا مانگی اور اللہ نے میری مراد پوری

کردی۔ سعدیؒ

ہیں کہ جس وقت امیر باپ اپنے بیٹے کے بارے میں یہ باتیں کر رہا تھا بیٹا اپنے دوستوں کی محفل میں بیٹھا ہو ا یہ کہہ رہا تھا کہا اے کاش !مجھے معلوم ہو جائے کہ وہ بابر کت درخت کس جگہ ہے ۔میں آج ہی وہاں جاؤں اور یہ دعا مانگو ں کہ میرا باپ جلد مر جائے تاکہ سارا مال اور جائیداد میرے قبضے میں آئے۔

دن کی زیادہ پڑھی گئیں پوسٹس‎